Zaviya E Nazar

زاویہ ِنظر

نظر کا زاویہ تبدیل ہو جانے سے کتنا فرق پڑتا ہے

کبھی غم باعثِ آزار لگتے ہیں

کبھی یہ غم ہی یارِ غار لگتے ہیں

کبھی ناکام ہو جانے سے کتنا خوف آتا ہے

کبھی نا کامیاں ہی جیت کی بنیاد لگتی ہیں

کبھی افسوس ہوتا ہے اگر کوئی ہمیں دھتکار ڈالے تو

کبھی بہتر یہی لگتا ہے بس ہم با وفا ہوں

لوگ تنہا چھوڑ دیں تو ٹھیک لگتا ہے

کبھی مبہم پریشاں راستے دشوار لگتے ہیں

کبھی لگتا ہے سب پامال راہوں سے ذرا ہٹ کر نیا رستہ بنانا،

جنگلوں میں راہ پالینا ہی تو حاصل ہے سفروں کا

کبھی دُنیا سند دے دے رضا مندی کی تو یہ امر سر کا تاج لگتاہے

کبھی یہ قلب مُہرِ آگہی کی آس رکھتا ہے

تو گویا بات ساری زاویے کی ہے

مگر یہ زاویہ بننے میں تھوڑا وقت لگتا ہے

سفر درکار ہوتا ہے

کوئی ایسا سفر جو قلب کو تحریک دیتا ہو

اشاروں اور خوابوں کو نئی تعبیر دیتا ہو

جو ماضی کے کئی مبہم حوالوں کواکٹھا جوڑ کر فردا کو اک تصویر دیتا ہو

کوئی ایسا سفر جو آدمی کو اس کے اندر کے جہاں سے رابطہ دے دے

نیا اک راستہ دے دے !

حقیقت کا پتا دے دے!

عماد احمد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(429) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Emad Ahmad, Zaviya E Nazar in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 22 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Emad Ahmad.