Khumar Ankhoon Mein Chehra Gulal Hota Hai

خمار آنکھوں میں، چہرہ گلال ہوتا ہے

خمار آنکھوں میں، چہرہ گلال ہوتا ہے

مگر بلاوٴ تو لہجہ نڈھال ہوتا ہے

ہزار طرز کی آسودگی میسر ہو

گزرتے سالوں کا اپنا ملال ہوتا ہے

رموزِ ذات کی وادی ہے پُر خراش بہت

کٹا کے عُمر ہی رستہ بحال ہوتا ہے

شعورِ حق سے مٹایا تو مٹ گیا، ورنہ

نقوشِ وقت کا مٹنا محال ہوتا ہے

ملالِ جان کو اتنا تو ہم سمجھتے ہیں

ہمیں پتا ہے جو صدموں سے حال ہوتا ہے

عجب نہیں کہ مجھے دیکھ کر وہ رک جائے

اداس آنکھوں کا اپنا جمال ہوتا ہے

اسیرِ ضبطِ غمِ دل بتا رہا ہے، سنو!

فرار ہونے کا رستہ محال ہوتا ہے

میں اپنے آپ سے اکثر سوال کرتا ہوں

مرے جواب میں اکثر سوال ہوتا ہے

جو اپنے آپ کو تسخیر کرنا چاہتا ہو

وہ خود سے خود ہی بہت پائمال ہوتا ہے

عماد رات کے پہروں میں قلب کو دھو لو

تمام دن تو کدورت کا جال ہوتا ہے

عماد احمد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(557) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Emad Ahmad, Khumar Ankhoon Mein Chehra Gulal Hota Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 22 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Emad Ahmad.