Kabhi YaqeeN Se Hoi Aor Kabhi GumaN Se Hoi

کبھی یقیں سے ہوئی اور کبھی گماں سے ہوئی

کبھی یقیں سے ہوئی اور کبھی گماں سے ہوئی

ترے حضور رسائی کہاں کہاں سے ہوئی

فلک نہ ماہ منور نہ کہکشاں سے ہوئی

کھلی جب آنکھ ملاقات خاک داں سے ہوئی

نہ فلسفی نہ مفکر نہ نکتہ داں سے ہوئی

ادا جو بات ہمیشہ تری زباں سے ہوئی

کھلی نہ مجھ پہ بھی دیوانگی مری برسوں

مرے جنون کی شہرت ترے بیاں سے ہوئی

جو تیرے نام سے منسوب میرا نام ہوا

تو شہر بھر کو عداوت بھی میری جاں سے ہوئی

سنا کے سب کو اکیلا ہی رو رہا تھا میں

کسی کی آنکھ نہ تر میری داستاں سے ہوئی

جنہیں تھا ڈوبنا ان کو بھی دے دیا رستہ

کبھی کبھی یہ خطا بحر بیکراں سے ہوئی

فراغؔ ہاتھ سے کیا دامن خرد چھوٹا

کہ سر پہ سنگ کی بارش جہاں تہاں سے ہوئی

فراغ روہوی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(680) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Faragh Rohvi, Kabhi YaqeeN Se Hoi Aor Kabhi GumaN Se Hoi in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 16 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Faragh Rohvi.