Jab Achanak Meray Pehloo Se Mera Yaar OTha

جب اچانک مرے پہلو سے مرا یار اٹھا

جب اچانک مرے پہلو سے مرا یار اٹھا

درد سینے میں اٹھا اور کئی بار اٹھا

زندگی بوجھ نہ بن جائے تن آسانی سے

اپنے رستے میں کبھی خود کوئی دیوار اٹھا

صرصر وقت سے غافل تھا تو اے کبر نژاد

گر گئی خاک زمیں پر تری دستار اٹھا

وہم نظارہ میں ہے عافیت دیدہ و دل

بھول کر بھی نہ کبھی پردۂ اسرار اٹھا

جس سے ہو جائیں مرے چاہنے والے تقسیم

ایسی دیوار نہ کوئی مرے معمار اٹھا

خوف تادیب سے مظلوموں پہ رویا نہ گیا

شام مقتل میں کوئی بھی نہ عزادار اٹھا

دور تک پھیلا ہوا دشت بلا ہے باہر

اپنی محفل سے نہ مجھ کو مرے دل دار اٹھا

ناز بردار ہنر ہو گئے رخصت کب کے

اب بساط سخن و نغمہ و اشعار اٹھا

سامنے تیرے زر افشاں ہے نئی صبح امید

اپنی پلکوں کو ذرا دیدۂ خوں بار اٹھا

کل فراستؔ تھا یہاں مجمع یاراں ترے ساتھ

اب اسی شہر میں تنہائی کے آزار اٹھا

فراست رضوی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(535) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Frasat Rizvi, Jab Achanak Meray Pehloo Se Mera Yaar OTha in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 27 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Frasat Rizvi.