Samajte Hain Jo Apne Baap Ki Jageer Mati Ko

سمجھتے ہیں جو اپنے باپ کی جاگیر مٹی کو

سمجھتے ہیں جو اپنے باپ کی جاگیر مٹی کو

بناؤں گا میں ان کے پاؤں کی زنجیر مٹی کو

ہوا سطح زمیں پر اب خط گل زار کھینچے گی

کہ خوش آتی نہیں ہے ابر کی تحریر مٹی کو

سیہ پڑ جائے گی ذروں کی رنگت ایک ہی پل میں

اگر قسمت سے مل جائے مری تقدیر مٹی کو

جلالی آئنہ اک آسماں پر مہر تاباں ہے

بنایا ہے زمیں پر صبر کی تصویر مٹی کو

بجائے خاک اڑتے ہیں ستارے میری آنکھوں میں

کہ ہو جاتی ہے ایسے کام میں تاخیر مٹی کو

اسے مسمار کرنے میں کوئی مشکل نہیں ہوگی

پسند آئی ہے شہر خواب کی تعمیر مٹی کو

بہت روندا گیا ہے خاک کو اور خاک زادوں کو

عطا کی جائے گی اب غیب سے توقیر مٹی کو

کمال اپنا دکھائے گا طلسمی آئنہ ساجدؔ

کہ اب درکار ہے اک خواب کی تعبیر مٹی کو

غلام حسین ساجد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(451) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ghulam Hussain Sajid, Samajte Hain Jo Apne Baap Ki Jageer Mati Ko in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 88 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ghulam Hussain Sajid.