Sir Par Kisi Ghareeb Ke Nachar Gir Paray

سر پر کسی غریب کے ناچار گر پڑے

سر پر کسی غریب کے ناچار گر پڑے

ممکن ہے میرے صبر کی دیوار گر پڑے

کیا خوب سرخ رو ہوئے ہم کار عشق میں

دو چار کام آ گئے دو چار گر پڑے

اس بار جب اجل سے مرا سامنا ہوا

کشتی سے خواب ہاتھ سے پتوار گر پڑے

روشن کوئی چراغ نہیں نخل طور پر

سجدے میں کس کو دیکھ کر اشجار گر پڑے

کرتی ہے فرش خاک کو دیوار آئنہ

آنکھوں سے جب یہ دولت بیدار گر پڑے

اس پار دیکھ کر مجھے اک گل بدن کے ساتھ

جتنے مرے گلاب تھے اس پار گر پڑے

ساجدؔ اگر عزیز تھی اپنی انا انہیں

کیا سوچ کر گلی میں مرے یار گر پڑے

غلام حسین ساجد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(436) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ghulam Hussain Sajid, Sir Par Kisi Ghareeb Ke Nachar Gir Paray in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 88 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ghulam Hussain Sajid.