Rabt Asiiron Ko Abhi Is Gul Tar Se Kam Hai

ربط اسیروں کو ابھی اس گل تر سے کم ہے

ربط اسیروں کو ابھی اس گل تر سے کم ہے

ایک رخنہ سا ہے دیوار میں در سے کم ہے

حرف کی لو میں ادھر اور بڑھا دیتا ہوں

آپ بتلائیں تو یہ خواب جدھر سے کم ہے

ہاتھ دنیا کا بھی ہے دل کی خرابی میں بہت

پھر بھی اے دوست تری ایک نظر سے کم ہے

سوچ لو میں بھی ہوا چپ تو گراں گزرے گا

یہ اندھیرا جو مرے شور و شرر سے کم ہے

وہ بجھا جائے تو یہ دل کو جلا دے پھر سے

شام ہی کون سی راحت میں سحر سے کم ہے

خاک اتنی نہ اڑائیں تو ہمیں بھی بابرؔ

دشت اچھا ہے کہ ویرانی میں گھر سے کم ہے

ادریس بابر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(672) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Idris Babur, Rabt Asiiron Ko Abhi Is Gul Tar Se Kam Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 53 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 5 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Idris Babur.