Kisi Ke Ghar Nah Mah O Saal Ke Mausam Mein Rehtay Hain

کسی کے گھر نہ ماہ و سال کے موسم میں رہتے ہیں

کسی کے گھر نہ ماہ و سال کے موسم میں رہتے ہیں

کہ ہم ہجر و وصال یار کے عالم میں رہتے ہیں

وہی گلگوں قبائے یار ہے نظارۂ حیرت

اسی نا مہرباں کے گیسوئے پر خم میں رہتے ہیں

وہی پیاسی زمیں ہے حلقۂ زنجیر کی صورت

وہی اک آسماں جس کے تلے شبنم میں رہتے ہیں

ہمیں یہ رنگ و بو کی بات اب اچھی نہیں لگتی

برا کیا ہے جو ہم اپنی ہی چشم نم میں رہتے ہیں

گزر ہی جائے گی عمر رواں آہستہ آہستہ

اگرچہ علم ہے ہم اک دم بے دم میں رہتے ہیں

مہتاب حیدر نقوی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(378) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Mahtab Haider Naqvi, Kisi Ke Ghar Nah Mah O Saal Ke Mausam Mein Rehtay Hain in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 41 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Mahtab Haider Naqvi.