Mere Jaise Uss Ko Mohabbat Hui Thi

مرے جیسی اُس کو محبت ہوئی تھی

مرے جیسی اُس کو محبت ہوئی تھی

بچھڑنے تلک میں یہی سوچتی تھی

ترا سلوٹوں سے بھرا لہجہ سُن کر

ذرا سوچ! کیا میری حالت ہوئی تھی

یہی خیر ہے، خیر ہے یہ محبت

اسی بات سے میری ہمت بندھی تھی

یقیناً کوئی سحر پھونکا گیا تھا

تری سمت سوچے بِنا چل پڑی تھی

مجھے آسماں تک ہی جانا تھا لیکن

بناتے ہوئے رستہ میں گر پڑی تھی

مرا خود سے ملنا ضروری ہُوا تھا

جب اُس کی مکمل حقیقت کُھلی تھی

وہ کیوں رائیگانی پہ اپنی نہ روئے

جسے سچ میں سچی محبت ہوئی تھی

اُسے تحفے میں دھڑکنیں دی تھیں اپنی

وہ جس نے مری جان بدلے میں لی تھی

تو کیا اب برابر ہے ہونا نہ ہونا ؟

تو کیا میں کہیں اب نہیں جو کبھی تھی؟

ناہید ورک

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1231) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Naheed Virk, Mere Jaise Uss Ko Mohabbat Hui Thi in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Friendship, Bewafa, Heart Broken Urdu Poetry. Also there are 74 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Friendship, Bewafa, Heart Broken poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Naheed Virk.