Khud Apna Hath Bas Thame Hue Main Reh Gaya Hoon, Urdu Ghazal By Professor Rasheed Hasrat

Khud Apna Hath Bas Thame Hue Main Reh Gaya Hoon is a famous Urdu Ghazal written by a famous poet, Professor Rasheed Hasrat. Khud Apna Hath Bas Thame Hue Main Reh Gaya Hoon comes under the Sad, Heart Broken category of Urdu Ghazal. You can read Khud Apna Hath Bas Thame Hue Main Reh Gaya Hoon on this page of UrduPoint.

خُود اپنا ہاتھ بس تھامے ہُوئے مَیں رہ گیا ہُوں

پروفیسر رشید حسرت

خُود اپنا ہاتھ بس تھامے ہُوئے مَیں رہ گیا ہُوں

صدی کا دُکھ ہُوں جو آنکھوں سے اپنی بہہ گیا ہُوں

کبھی بھی اور کِسی کا حق ہڑپ کرنا نہِیں ہے

یہی بچّوں سے اپنے مرتے مرتے کہہ گیا ہُوں

وہاں سے ہے غُلاموں کا کوئی جرّار لشکر

مگر اِس سمت سے لڑنے کو مَیں اِک شہ گیا ہُوں

یہ سچ ہے اپنے بچّوں کے لِیے تھا ایک ڈھارس

چلا آیا ہے وہ طُوفان خُود پر ڈہ گیا ہُوں

خُود اپنے آپ پر تنقِید کی ہے آپ مَیں نے

کہُوں کیا آپ اپنی بات ہنس کر سہہ گیا ہُوں

مزے لے لے کے پڑھتے ہو کُھلا خط ہُوں مَیں کوئی؟

کیا مشہُور اُس نے مَیں یہاں سے تہہ گیا ہُوں

ہتھیلی میں سمویا اُس نے، اُس کو پیاس بھی تھی

مگر حسرتؔ مَیں درزوں میں سے پِھر بھی بہہ گیا ہُوں

پروفیسر رشید حسرت

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(3356) ووٹ وصول ہوئے

You can read Khud Apna Hath Bas Thame Hue Main Reh Gaya Hoon written by Professor Rasheed Hasrat at UrduPoint. Khud Apna Hath Bas Thame Hue Main Reh Gaya Hoon is one of the masterpieces written by Professor Rasheed Hasrat. You can also find the complete poetry collection of Professor Rasheed Hasrat by clicking on the button 'Read Complete Poetry Collection of Professor Rasheed Hasrat' above.

Khud Apna Hath Bas Thame Hue Main Reh Gaya Hoon is a widely read Urdu Ghazal. If you like Khud Apna Hath Bas Thame Hue Main Reh Gaya Hoon, you will also like to read other famous Urdu Ghazal.

You can also read Sad Poetry, If you want to read more poems. We hope you will like the vast collection of poetry at UrduPoint; remember to share it with others.