The Kahan Ke Kahan Par Utare Gaye, Urdu Ghazal By Professor Rasheed Hasrat

The Kahan Ke Kahan Par Utare Gaye is a famous Urdu Ghazal written by a famous poet, Professor Rasheed Hasrat. The Kahan Ke Kahan Par Utare Gaye comes under the Sad category of Urdu Ghazal. You can read The Kahan Ke Kahan Par Utare Gaye on this page of UrduPoint.

تھے کہاں کے، کہاں پر اُتارے گئے

پروفیسر رشید حسرت

تھے کہاں کے، کہاں پر اُتارے گئے

کھینچ کر ہم زمِیں پر جو مارے گئے

جو اُتارے گئے تھے ہمارے لِئے

سب کے سب چاند، سُورج، سِتارے گئے

ناؤ احساس کی ڈگمگا سی گئی

اور ہاتھوں سے ندیا کے دھارے گئے

عِشق لِپٹا ہی سارا خساروں میں ہے

فائدہ کیا ہُؤا گر خسارے گئے

اور کُچھ بھی تو ہم سے نہِیں بن پڑا

اپنے ارماں کے سر ہی اتارے گئے

جو عقِیدت کے اپنے دِلوں میں رہے

سِلسِلے وہ ہمارے تُمہارے گئے

عاشِقوں کے لِئے ہم ہُوئے سربکف

موت کے منہ میں جتنے بھی سارے گئے

یاد آئیں تو آنسُو چھلکنے لگیں

وہ زمانے کہ تُجھ بِن گزارے گئے

آگ کا ایک دریا ہے کرنا عُبُور

اور حسرتؔ یہ بازی جو ہارے گئے

پروفیسر رشید حسرت

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(970) ووٹ وصول ہوئے

You can read The Kahan Ke Kahan Par Utare Gaye written by Professor Rasheed Hasrat at UrduPoint. The Kahan Ke Kahan Par Utare Gaye is one of the masterpieces written by Professor Rasheed Hasrat. You can also find the complete poetry collection of Professor Rasheed Hasrat by clicking on the button 'Read Complete Poetry Collection of Professor Rasheed Hasrat' above.

The Kahan Ke Kahan Par Utare Gaye is a widely read Urdu Ghazal. If you like The Kahan Ke Kahan Par Utare Gaye, you will also like to read other famous Urdu Ghazal.

You can also read Sad Poetry, If you want to read more poems. We hope you will like the vast collection of poetry at UrduPoint; remember to share it with others.