Or Diya Jalta Hai Khawab Main

اور دیا جلتا ہے خواب میں

وہی کائنات کی پھیلتی ہوئی ظلمتیں

وہی سورجوں کی ہے بے بسی

یہی ایک منظر رو برو

(مرے شش جہات کی داستاں)

مجھے لمحہ لمحہ نگل رہا ہے

مگر کہیں

مری خواب رات کے آسمان پہ کوئی ہالۂ نور ہے

جو ازل سے تا بہ ابد فضائے فنا میں درج ہے ایسی سطر دوام کی

جسے مسجدوں کے اجاڑ طاق ترس گئے

جسے ڈھونڈتے کئی دن مہینے برس گئے

سعید احمد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(630) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Saeed Ahmad, Or Diya Jalta Hai Khawab Main in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 22 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Saeed Ahmad.