Ankhoon Ko Khawab Nak Banana Para Hai

آنکھوں کو خواب ناک بنانا پڑا مجھے

آنکھوں کو خواب ناک بنانا پڑا مجھے

سو رتجگوں سے ربط بڑھانا پڑا مجھے

شاید ہوا تھی ایک بہانے کی منتظر

کچھ اس لیے بھی دیپ جلانا پڑا مجھے

اس کی لگائی آگ نے شہروں کو آ لیا

ملا کو جا کے دین سکھانا پڑا مجھے

دل شوخیوں سے باز نہ آتا تھا اس لیے

اس کو دیار عشق میں لانا پڑا مجھے

سنتی نہیں تھی خلق خدا چیخ چیخ کر

اب آسمان سر پہ اٹھانا پڑا مجھے

اک تابناک عشق کے اس اختتام پر

کچھ دل کا حوصلہ بھی بڑھانا پڑا مجھے

دریافت ایک شخص کو کرنا تھا دوستو

سو آئنے کے سامنے جانا پڑا مجھے

صائم جی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(599) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Saim Ji, Ankhoon Ko Khawab Nak Banana Para Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 13 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Saim Ji.