Umeed Se Kam Chasham Khredar Mein Aaye

امید سے کم چشم خریدار میں آئے

امید سے کم چشم خریدار میں آئے

ہم لوگ ذرا دیر سے بازار میں آئے

سچ خود سے بھی یہ لوگ نہیں بولنے والے

اے اہل جنوں تم یہاں بے کار میں آئے

یہ آگ ہوس کی ہے جھلس دے گی اسے بھی

سورج سے کہو سایۂ دیوار میں آئے

بڑھتی ہی چلی جاتی ہے تنہائی ہماری

کیا سوچ کے ہم وادئ انکار میں آئے

شہریار

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(539) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Shahryar, Umeed Se Kam Chasham Khredar Mein Aaye in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 150 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Shahryar.