Be Karaan Vusaton Main Tanha

بے کراں وسعتوں میں تنہا

سفر میں ہوں اور رکا کھڑا ہوں

میں چاروں سمتوں میں چل رہا ہوں مگر کہاں ہوں

وہیں جہاں سرخ روشنائی کا ایک قطرہ

کسی قلم کی کثیف نب سے ٹپک پڑا ہے

میں خود بھی شاید کسی قلم سے گرا ہوا ایک سرخ قطرہ ہوں

زندگی کی سجل جبیں پر چمکتی بندیا سی بن گیا ہوں

مگر میں بندیا نہیں ہوں شاید کہ وہ تو تقدیس کا نشاں ہے

دلوں کے دھاگوں کی اک گرہ ہے

گرہ جو صدیوں میں بننے والے حسین رشتوں کا آشرم ہے

جو آنے والے تڑپتی صدیوں کی ابتدا ہے

گرہ تو جنکشن ہے پٹریوں کا مسافروں کا نئی نویلی رفاقتوں کا

محبتوں کا اذیتوں کا

مگر میں تنہا ہوں بے کراں وسعتوں میں تنہا

سفید ماضی سفید فردا سفید یہ لمحۂ عبادت

کہ جس پہ کوئی نہیں عبارت

سفید ماتھے پہ سرخ دھبہ ہوں

ابتدا انتہا کے دھاگوں سے کٹ چکا ہوں

میں سرخ دھبہ ہوں

کپکپاتے لطیف عکسوں کا سلسلہ ہوں

تمام چہرے جو تیرے اندر سے جھانکتے ہیں

مرے ہی چہرے کی جھلکیاں ہیں

مرے ہی سینے کی دھڑکنیں ہیں

یہ تیز رنگوں کے تند دریا

جو دکھ کے کوہ گراں سے رس کر

زمیں کی بنجر اداس سی سلطنت کو چھو کر

اس ایک بے انت سرخ نقطے کے بحر ظلمات میں گرے ہیں

مرے ہی بے نام دست و پا ہیں

یہ جگمگاتی سی کہکشائیں جو ابتدا سے

خلا کی ظلمت میں قید باہر کو اڑ رہی ہیں

گرہیں بنی ہیں

وہیں کھڑی ہیں

وہیں جہاں سرخ روشنائی کا ایک قطرہ

کسی قلم کی کثیف نب سے ٹپک پڑا ہے

وہ ایک قطرہ جو میرا دل ہے

جو میرے عکسوں کا سلسلہ ہے

جو میرے ہونے سے سرخ رو ہے

جو میری پابستہ آرزو ہے

وزیر آغا

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(882) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Wazir Agha, Be Karaan Vusaton Main Tanha in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 101 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Wazir Agha.