Tum Jo Atay Ho

تم جو آتے ہو

تم جو آتے ہو

تو کچھ بھی نہیں رہتا موجود

تم چلے جاتے ہو

اور بولنے لگتے ہیں تمام

ادھ کھلے پھول

سماعت پہ جمی چاپ ہوا بند مکان

گفتگو کرنے کے آسن میں رکے سب اجسام

مردہ لمحات کا اک ڈھیر پہاڑ

ابر کی قاش اٹھی موج کا ساکت اندام

برف لب پلکوں پہ ٹانکے ہوئے موتی آنسو

اور سلے کانوں میں آواز کی سوئیاں بے جان

یک بیک بولنے لگتے ہیں تمام

زندگی بننے میں ہو جاتی ہے پھر سے مصروف

وقت ہو جاتا ہے پھر خاک بہ سر بے آرام

ایک پنچھی جسے اڑتے چلے جانا ہے خدا جانے کہاں

اور میں تنکوں کے بکھرے ہوئے بستر کی طرح

منتظر لوٹ کے تم آؤ کسی روز یہاں

پھر ہوں اک بار معطل

یہ زمیں اور زماں

وزیر آغا

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(481) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Wazir Agha, Tum Jo Atay Ho in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 101 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 5 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Wazir Agha.