Badal Baras Ke Khil Gaya Rut Meheraban Hoi

بادل برس کے کھل گیا رت مہرباں ہوئی

بادل برس کے کھل گیا رت مہرباں ہوئی

بوڑھی زمیں نے تن کے کہا میں جواں ہوئی

مکڑی نے پہلے جال بنا میرے گرد پھر

مونس بنی رفیق بنی پاسباں ہوئی

شب کی رکاب تھام کے خوشبو ہوئی جدا

دن چڑھتے چڑھتے بسری ہوئی داستاں ہوئی

کرتے ہو اب تلاش ستاروں کو خاک پر

جیسے زمیں زمیں نہ ہوئی آسماں ہوئی

اس بار ایسا قحط پڑا چھاؤں کا کہ دھوپ

ہر سوکھتے شجر کے لیے سائباں ہوئی

گیلی ہوا کے لمس میں کچھ تھا وگرنہ کب

کلیوں کی باس گلیوں کے اندر رواں ہوئی

آنا ہے گر تو آؤ کہ چلنے لگی ہوا

کشتی سمندروں میں کھلا بادباں ہوئی

وزیر آغا

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(631) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Wazir Agha, Badal Baras Ke Khil Gaya Rut Meheraban Hoi in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 101 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Wazir Agha.