Gir Samar Ki Tamanna Liye Ho Daali Say

گر ثمر کی تمنا لیے ہو ڈالی سے

گر ثمر کی تمنا لیے ہو ڈالی سے

گرا نہ دینا سبھی بور بے خیالی سے

ہزاروں لوگ محبت سے لیتے آئے ہیں

جو کام لینے لگے ہیں جناب گالی سے

ہر ایک جذبہ ہے عکاسِ فطرتِ انساں

گریز کرنا گلابوں کی پائمالی سے

کوئی کسی کا نہ محتاج ہو زمانے میں

سلوک اچھا کہاں ہوتا ہے سوالی سے

یقین کر تری جانب پلٹ کے آتا میں

نکل نہ آتا اگر حل شکستہ حالی سے

نمایاں ہونے لگے دھڑکنوں کے زیروبم

تمہاری زلف الجھنے لگی ہے بالی سے

وفا پرست ہوں لیکن مزاج نازک ہے

گنوا بھی سکتے ہو مجھ کو بے اعتدالی سے

یونہی فضا میں تمازت نہیں بڑھی جاذب

گلاب جلنے لگے ہیں لبوں کی لالی سے

اکرم جاذب

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(250) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Akram Jazib, Gir Samar Ki Tamanna Liye Ho Daali Say in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 13 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Akram Jazib.