Hamaray Hath Main Jab Koi Jam Aya Hai

ہمارے ہاتھ میں جب کوئی جام آیا ہے

ہمارے ہاتھ میں جب کوئی جام آیا ہے

تو لب پہ کتنے ہی پیاسوں کا نام آیا ہے

کہاں کا نور یہاں رات ہو گئی گہری

مرا چراغ اندھیروں کے کام آیا ہے

یہ کیا غضب ہے جو کل تک ستم رسیدہ تھے

ستم گروں میں اب ان کا بھی نام آیا ہے

تمام عمر کٹی اس کی جستجو کرتے

بڑے دنوں میں یہ طرز کلام آیا ہے

بڑھوں تو راکھ بنوں مڑ چلوں تو پتھرا جاؤں

سفر میں شوق کے نازک مقام آیا ہے

خبر بھی ہے مرے گلشن کے لالہ و گل کو

مرا لہو بھی بہاروں کے کام آیا ہے

وہ سرپھرے جو نگہ داریٔ جنوں میں رہے

سرورؔ ان میں ہمارا بھی نام آیا ہے

آل احمد سرور

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(347) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ale Ahmad Suroor, Hamaray Hath Main Jab Koi Jam Aya Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 49 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ale Ahmad Suroor.