Khmosh Jada Inkar Bhi Hai Sehra Bhi

خموش جادۂ انکار بھی ہے صحرا بھی

خموش جادۂ انکار بھی ہے صحرا بھی

عزا میں پائے جنوں بار بھی ہے صحرا بھی

کہیں بھی جائیں لہو کو تو صرف ہونا ہے

کہ تشنہ کوچۂ دل دار بھی ہے صحرا بھی

متاع زیست خریدیں کہ تیری سمت بڑھیں

ہمارے سامنے بازار بھی ہے صحرا بھی

مجھے تو ساری حدوں سے گریز کرنا ہے

مرا حریف تو گھر بار بھی ہے صحرا بھی

یہیں یہ دھول یہیں خوشبوئیں بھی اڑتی ہیں

یہ دل کہ خطۂ گلزار بھی ہے صحرا بھی

نہ چھوڑتا ہے نہ زنجیر کر کے رکھتا ہے

ترا خیال کہ دیوار بھی ہے صحرا بھی

یہ کیا جگہ ہے جہاں دونوں وقت ملتے ہیں

یہاں درخت ثمر بار بھی ہے صحرا بھی

ذرا سی چوک سے پانسہ پلٹ بھی سکتا ہے

کہ عقل شہر فسوں کار بھی ہے صحرا بھی

ارشد عبدالحمید

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(353) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Arshad Abdul Hamid, Khmosh Jada Inkar Bhi Hai Sehra Bhi in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 37 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.8 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Arshad Abdul Hamid.