Dushman Say Bhi Haath Milaya Ja Sakta Hai

دشمن سے بھی ہاتھ ملایا جا سکتا ہے

دشمن سے بھی ہاتھ ملایا جا سکتا ہے

درد کا بھی تو لطف اٹھایا جا سکتا ہے

پھر سے ایک محبت بھی کی جاسکتی ہے

تیرے غم سے ہاتھ چھڑایا جا سکتا ہے

سانجھا کوئی بیچ میں پیڑ لگا لیتے ہیں

جس کا دونوں گھر میں سایہ جا سکتا ہے

ہمسائے جو اپنے گھر میں آج نہیں ہیں

دیواروں کو درد سنایا جا سکتا ہے

ہجر کے ہاتھ پہ خود داری کو گروی رکھ کے

پھر سے اس کو فون لگایا جا سکتا ہے

ساری رات عبادت تو ہے مشکل عزمی

ہاں رستے سے سنگ ہٹایا جا سکتا ہے

عزم الحسنین عزمی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(969) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Azm Ul Hasnain Azmi, Dushman Say Bhi Haath Milaya Ja Sakta Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 8 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 5 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Azm Ul Hasnain Azmi.