Yun Pohanchna Hai Mujhe Rooh Ki Tugiyani Tak

یوں پہنچنا ہے مجھے روح کی طغیانی تک

یوں پہنچنا ہے مجھے روح کی طغیانی تک

جس طرح رسی سے جاتا ہے گھڑا پانی تک

کاٹنی پڑتی ہے ناخن سے تکن کی زنجیر

یوں ہی آتی نہیں مشکل کوئی آسانی تک

زندگی تجھ سے بنائے ہوئے رشتے کی ہوس

مجھ کو لے آئی ہے دنیا کی پریشانی تک

ایسے جراحوں کا قبضہ ہے سخن پر افسوس

کر نہیں سکتے جو لفظوں کی مسلمانی تک

اپنے اندر میں کیا کرتا ہوں راجا کی تلاش

اس وسیلے سے پہنچنا ہے مجھے رانی تک

ایسے لفظوں کو بھی بے عیب بنایا ہم نے

جن کی جائز ہی نہیں ہوتی تھی قربانی تک

حسن کا پاؤں دباتی ہے جہاں شوخ ہوا

عشق لے آیا ہے مجھ کو اسی ویرانی تک

فیضؔ ہم لوگ ہیں اک ایسی کچہری کے وکیل

فوجداری سے پہنچتے ہیں جو دیوانی تک

فیض خلیل آبادی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(569) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Faiz KhalilAbadi, Yun Pohanchna Hai Mujhe Rooh Ki Tugiyani Tak in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 15 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Faiz KhalilAbadi.