Bay Baak Andheray

بے باک اندھیرے

جب کبھی شب کے طلسمات میں کھو جاتا ہوں

یا ترے حسن کی آغوش میں سو جاتا ہوں

تیری تصویر ابھرتی ہے پس پردۂ خواب

ایک ٹوٹے ہوئے بے لوث ستارے کی طرح

چیر کر سینۂ آفاق کی تاریک فضا

از‌‌ راہ وفا تیری تصویر اٹھا لیتا ہوں

عارض و لب کے جواں گیت چرا لیتا ہوں

دور تک جادۂ فردا پہ مہک اٹھتے ہیں

امید کے پھول خواب فردا کے گلاب

جگمگاتے ہیں مرے دل کے چراغ

اور جب سرحد ادراک پہ سینے سے لگائے ہوئے تصویر تری

سانس لیتا ہوں ٹھہر جاتا ہوں

ناگہاں

آندھیاں چلتی ہیں اڑاتی ہوئی دھول

غم کے طوفان مچل جاتے ہیں

تیری تصویر کے ابھرے ہوئے سب نقش و نگار

جا کے بے باک اندھیروں سے لپٹ جاتے ہیں

فرید عشرتی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(632) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Fareed Ishrati, Bay Baak Andheray in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 16 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Fareed Ishrati.