Bacha Kar Naaz Se Tu Os Ko Phir Andaz Se Maara

بچا گر ناز سے تو اس کو پھر انداز سے مارا

بچا گر ناز سے تو اس کو پھر انداز سے مارا

کوئی انداز سے مارا تو کوئی ناز سے مارا

کسی کو گرمیٔ تقریر سے اپنی لگا رکھا

کسی کو منہ چھپا کر نرمیٔ آواز سے مارا

ہمارا مرغ دل چھوڑا نہ آخر اس شکاری نے

گہے شاہین پھینکے اس پہ گاہے باز سے مارا

غزل پڑھتے ہی میری یہ مغنی کی ہوئی حالت

کہ اس نے ساز مارا سر سے اور سر ساز سے مارا

نکالی رسم تیغ و طشت دلی میں جزاک اللہ

کہ مارا تو ہمیں تو نے پر اک اعزاز سے مارا

نہ اڑتا مرغ دل تو چنگل شاہیں میں کیوں پھنستا

گیا یہ خستہ اپنی خوبیٔ پرواز سے مارا

جہاں تک ساز داری ہے لکھی دشمن کے طالع میں

ہمیں بد نام کر کے طالع نا ساز سے مارا

ہزاروں رنگ اس کے خون نے یاروں کو دکھلائے

جب اس نے مصحفیؔ کو اپنی تیغ ناز سے مارا

غلام ہمدانی مصحفی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(733) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ghulam Hamdani Mushafi, Bacha Kar Naaz Se Tu Os Ko Phir Andaz Se Maara in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 51 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ghulam Hamdani Mushafi.