Ab To Kuch Aur Bhi Andhera Hai

اب تو کچھ اور بھی اندھیرا ہے

اب تو کچھ اور بھی اندھیرا ہے

یہ مری رات کا سویرا ہے

رہزنوں سے تو بھاگ نکلا تھا

اب مجھے رہبروں نے گھیرا ہے

آگے آگے چلو تبر والو

ابھی جنگل بہت گھنیرا ہے

قافلہ کس کی پیروی میں چلے

کون سب سے بڑا لٹیرا ہے

سر پہ راہی کے سربراہی نے

کیا صفائی کا ہاتھ پھیرا ہے

سرمہ آلود خشک آنسوؤں نے

نور جاں خاک پر بکھیرا ہے

راکھ راکھ استخواں سفید سفید

یہی منزل یہی بسیرا ہے

اے مری جان اپنے جی کے سوا

کون تیرا ہے کون میرا ہے

سو رہو اب حفیظؔ جی تم بھی

یہ نئی زندگی کا ڈیرا ہے

حفیظ جالندھری

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(3330) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Hafeez Jalandhari, Ab To Kuch Aur Bhi Andhera Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 104 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Hafeez Jalandhari.