Tu Meri Khoi Nishani Ke Siwa Kuch Bhi Nahi, Urdu Ghazal By Jamal Ehsani

Tu Meri Khoi Nishani Ke Siwa Kuch Bhi Nahi is a famous Urdu Ghazal written by a famous poet, Jamal Ehsani. Tu Meri Khoi Nishani Ke Siwa Kuch Bhi Nahi comes under the Sad category of Urdu Ghazal. You can read Tu Meri Khoi Nishani Ke Siwa Kuch Bhi Nahi on this page of UrduPoint.

تُو میری کھوئی نشانی کے سوا کچھ بھی نہیں

جمال احسانی

تُو میری کھوئی نشانی کے سوا کچھ بھی نہیں

میں تیری یاد دہانی کے سوا کچھ بھی نہیں

بند کمروں میں مکیں سوتے ہیں اور آنگن میں

میرے اور رات کی رانی کے سوا کچھ بھی نہیں

یہ تجھے ایک نظر دیکھنے والوں کا ہجوم

میری ناپختہ بیانی کے سوا کچھ بھی نہیں

جو اُترتا ہے وہ بہتا ہی چلا جاتا ہے

گویا دریا میں روانی کے سوا کچھ بھی نہیں

جتنے چہرے ہیں وہ مٹی کے بنائے ہوئے ہیں

جتنی آنکھیں ہیں وہ پانی کے سوا کچھ بھی نہیں

جمال احسانی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(512) ووٹ وصول ہوئے

You can read Tu Meri Khoi Nishani Ke Siwa Kuch Bhi Nahi written by Jamal Ehsani at UrduPoint. Tu Meri Khoi Nishani Ke Siwa Kuch Bhi Nahi is one of the masterpieces written by Jamal Ehsani. You can also find the complete poetry collection of Jamal Ehsani by clicking on the button 'Read Complete Poetry Collection of Jamal Ehsani' above.

Tu Meri Khoi Nishani Ke Siwa Kuch Bhi Nahi is a widely read Urdu Ghazal. If you like Tu Meri Khoi Nishani Ke Siwa Kuch Bhi Nahi, you will also like to read other famous Urdu Ghazal.

You can also read Sad Poetry, If you want to read more poems. We hope you will like the vast collection of poetry at UrduPoint; remember to share it with others.