Wehshi Thay Boye Gul Ki Terhan Is Jahan Mein Hum

وحشی تھے بوئے گل کی طرح اس جہاں میں ہم

وحشی تھے بوئے گل کی طرح اس جہاں میں ہم

نکلے تو پھر کے آئے نہ اپنے مکاں میں ہم

ساکن ہیں جوش اشک سے آب رواں میں ہم

رہتے ہیں مثل مردم آبی جہاں میں ہم

شیدائے روئے گل نہ تو شیدائے قد سرو

صیاد کے شکار ہیں اس بوستاں میں ہم

نکلی لبوں سے آہ کہ گردوں نشانہ تھا

گویا کہ تیر جوڑے ہوئے تھے کماں میں ہم

آلودۂ گناہ ہے اپنا ریاض بھی

شب کاٹتے ہیں جاگ کے مغ کی دکاں میں ہم

ہمت پس از فنا سبب ذکر خیر ہے

مردوں کا نام سنتے ہیں ہر داستاں میں ہم

ساقی ہے یار ماہ لقا ہے شراب ہے

اب بادشاہ وقت ہیں اپنے مکاں میں ہم

نیرنگ روزگار سے ایمن ہیں شکل سرو

رکھتے ہیں ایک حال بہار و خزاں میں ہم

دنیا و آخرت میں طلب گار ہیں ترے

حاصل تجھے سمجھتے ہیں دونوں جہاں میں ہم

پیدا ہوا ہے اپنے لیے بوریائے فقر

یہ نیستاں ہے شیر ہیں اس نیستاں میں ہم

خواہاں کوئی نہیں تو کچھ اس کا عجب نہیں

جنس گراں بہا ہیں فلک کی دکاں میں ہم

لکھا ہے کس کے خنجر مژگاں کا اس نے وصف

اک زخم دیکھتے ہیں قلم کی زباں میں ہم

کیا حال ہے کسی نے نہ پوچھا ہزار حیف

نالاں رہے جرس کی طرح کارواں میں ہم

آیا ہے یار فاتحہ پڑھنے کو قبر پر

بیدار بخت خفتہ ہے خواب گراں میں ہم

شاگرد طرز خندہ زنی میں ہے گل ترا

استاد عندلیب ہیں سوز و فغاں میں ہم

باغ جہاں کو یاد کریں گے عدم میں کیا

کنج قفس سے تنگ رہے آشیاں میں ہم

اللہ رے بے قرارئ دل ہجر یار میں

گاہے زمیں میں تھے تو گہے آسماں میں ہم

دروازہ بند رکھتے ہیں مثل حباب بحر

قفل درون خانہ ہیں اپنے مکاں میں ہم

آتشؔ سخن کی قدر زمانے سے اٹھ گئی

مقدور ہو تو قفل لگا دیں زباں میں ہم

خواجہ حیدر علی آتش

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1247) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Khwaja Haider Ali Aatish, Wehshi Thay Boye Gul Ki Terhan Is Jahan Mein Hum in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 133 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Khwaja Haider Ali Aatish.