Apni Khatir Sitam Ijaad Bhi Hum Karte Hain

اپنی خاطر ستم ایجاد بھی ہم کرتے ہیں

اپنی خاطر ستم ایجاد بھی ہم کرتے ہیں

اور پھر نالہ و فریاد بھی ہم کرتے ہیں

ایک دنیا مری آباد ہے جن سے وہی خواب

کبھی پسپا کبھی برباد بھی ہم کرتے ہیں

خانۂ جسم میں ہنگامہ مچا رکھا ہے

لے مری جاں تجھے آزاد بھی ہم کرتے ہیں

اپنے احباب پہ کرتے ہیں دل و جان نثار

اور اکثر انہیں نا شاد بھی ہم کرتے ہیں

رنج الفت کے سوا اے دل نادان بتا

تھا کوئی رنج جسے یاد بھی ہم کرتے ہیں

اور بھی لوگ ہیں اس کار زیاں میں ہمراہ

سو ان اشعار کو ارشاد بھی ہم کرتے ہیں

مہتاب حیدر نقوی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(268) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Mahtab Haider Naqvi, Apni Khatir Sitam Ijaad Bhi Hum Karte Hain in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 41 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Mahtab Haider Naqvi.