Aik Aik Jharoka Khanda Bah Lab Aik Aik Gali Kohram

ایک ایک جھروکا خندہ بہ لب ایک ایک گلی کہرام

ایک ایک جھروکا خندہ بہ لب ایک ایک گلی کہرام

ہم لب سے لگا کر جام ہوئے بدنام بڑے بدنام

رت بدلی کہ صدیاں لوٹ آئیں اف یاد کسی کی یاد

پھر سیل زماں میں تیر گیا اک نام کسی کا نام

دل ہے کہ اک اجنبیٔ حیراں تم ہو کہ پرایا دیس

نظروں کی کہانی بن نہ سکیں ہونٹوں پہ رکے پیغام

روندیں تو یہ کلیاں نیش بلا چومیں تو یہ شعلے پھول

یہ غم یہ کسی کی دین بھی ہے انعام عجب انعام

اے تیرگیوں کی گھومتی رو کوئی تو رسیلی صبح

اے روشنیوں کی ڈولتی لو اک شام نشیلی شام

رہ رہ کے جیالے راہیوں کو دیتا ہے یہ کون آواز

کونین کی ہنستی منڈیروں پر تم ہو کہ غم ایام

بے برگ شجر گردوں کی طرف پھیلائیں ہمکتے ہات

پھولوں سے بھری ڈھلوان پہ سوکھے پات کریں بسرام

ہم فکر میں ہیں اس عالم کا دستور ہے کیا دستور

یہ کس کو خبر اس فکر کا ہے دستور دو عالم نام

مجید امجد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1566) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Majeed Amjad, Aik Aik Jharoka Khanda Bah Lab Aik Aik Gali Kohram in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 78 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Majeed Amjad.