Ghazal Ankhoon Main Nasha Sa Hai Khudai Ka

غزال آنکھوں میں نشہ سا ہے خدائی کا

غزال آنکھوں میں نشہ سا ہے خدائی کا

سو دل میں بڑھنے لگا کرب نارسائی کا

ابھی تو اشک فشانی بدن میں ٹھہری ہے

ابھی تو زخم ہے تازہ تری جدائی کا

مجھے خبر ہے کہ دکھ اور بڑھتے جائیں گے

کہ شہر بھر کا جو شیوہ ہے بے وفائی کا

مرے وجود میں صدیوں کی بد گمانی تھی

کہ ایک لہجہ بھی ہوتا ہے بے نوائی کا

کھلا جو شاخ پہ ٹوٹا ہوا کے جھونکے سے

تھا برگِ زرد طلب گار سبز کائی کا

قفس میں ٹوٹے ہوئے پر بڑی رکاوٹ تھے

ملا تھا حکم پرندے کو جب رہائی کا

مجھے بھی شوق طلب ایک بار تھا خاورؔ

اسے بھی ناز رہا اپنی پارسائی کا

مرید عباس خاور

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(959) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Mureed Abbas Khawar, Ghazal Ankhoon Main Nasha Sa Hai Khudai Ka in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 8 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Mureed Abbas Khawar.