Darya Ka Pher Kis Ne Paya Hai

دریا کا پھیر کس نے پایا ہے!

دریا بہتا رہے گا

تم اس کے کنارے

بیٹھو یا نہ بیٹھو

اس کے پانیوں میں اترو یا نہ اترو

اسے پار کرو یا نہ کرو

جسم کی ناؤ اس میں

اتارو یا نہ اتارو

دریا بہتا رہے گا

اس کے آگے بند باندھ کر

جھیل بناؤ

یا مٹی کے پشتوں سے

اس کا راستہ روکو،

یہ پھر چل پڑے گا

پرندوں اور مچھلیوں کی جلو میں

کھیتوں اور میدانوں سے ہوتا ہوا

ایک ابدی بہاؤ کی جانب

ندیاں اور نالے

پھر اس میں آن ملیں گے

دریا بہتا رہے گا

اپنی رَو میں، روانیوں میں

ملاحوں کے گیتوں میں، بانیوں میں

شاعری میں

اور کہانیوں میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔!!

نصیر احمد ناصر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(311) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Naseer Ahmed Nasir, Darya Ka Pher Kis Ne Paya Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 28 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Naseer Ahmed Nasir.