Mushkil Hai Ke Ab Shehr Main Niklay Koi Ghar Say

مشکل ہے کہ اب شہر میں نکلے کوئی گھر سے

مشکل ہے کہ اب شہر میں نکلے کوئی گھر سے

دستار پہ بات آ گئی ہوتی ہوئی سر سے

برسا بھی تو کس دشت کے بے فیض بدن پر

اک عمر مرے کھیت تھے جس ابر کو ترسے

کل رات جو ایندھن کے لیے کٹ کے گرا ہے

چڑیوں کو بڑا پیار تھا اس بوڑھے شجر سے

محنت مری آندھی سے تو منسوب نہیں تھی

رہنا تھا کوئی ربط شجر کا بھی ثمر سے

خود اپنے سے ملنے کا تو یارا نہ تھا مجھ میں

میں بھیڑ میں گم ہو گئی تنہائی کے ڈر سے

بے نام مسافت ہی مقدر ہے تو کیا غم

منزل کا تعین کبھی ہوتا ہے سفر سے

پتھرایا ہے دل یوں کہ کوئی اسم پڑھا جائے

یہ شہر نکلتا نہیں جادو کے اثر سے

نکلے ہیں تو رستے میں کہیں شام بھی ہوگی

سورج بھی مگر آئے گا اس رہ گزر سے

پروین شاکر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(3060) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Parveen Shakir, Mushkil Hai Ke Ab Shehr Main Niklay Koi Ghar Say in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 140 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Parveen Shakir.