Falak Ka Canvas Chota Buhat Hai

فلک کا کینوس چھوٹا بہت ہے

فلک کا کینوس چھوٹا بہت ہے

مرے رنگوں میں یہ جھگڑا بہت ہے

یہ مٹی کیوں نہیں بھرتی، چٹختی

بدن کیا چاک پر گھوما بہت ہے

تجھے صدیاں لگیں گی جاتے جاتے

میں چاہوں تو مجھے لمحہ بہت ہے

یہ دریا رات میں صحرا لگے گا

مجھے یہ وہم یہ خدشہ بہت ہے

یہ سورج رات میں چندا دکھے گا

تخیل کا یہی کہنا بہت ہے

کبوتر ایک تھا گنبد کئی تھے

سو تپتی دھوپ میں بھاگا بہت ہے

مرے چہرے کی اس بد صورتی پر

تری نظروں کا یوں بہنا بہت ہے

فلک پر کانچ کی اک جھونپڑی ہو

یہ سپنا میں نے کیوں دیکھا بہت ہے

شفق، بادل، گلابی شام، ہم تم

یہ منظر آنچ پر رکھا بہت ہے

مری غزلوں کے ماتھے پر ہمیشہ

مرے ابو ! تیرا بوسہ بہت ہے

قندیل بدر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(938) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Qandeel Badar, Falak Ka Canvas Chota Buhat Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 19 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.8 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Qandeel Badar.