Aankh Ki Yeh Aik Hasrat Thi Ke Bas Poori Hoi

آنکھ کی یہ ایک حسرت تھی کہ بس پوری ہوئی

آنکھ کی یہ ایک حسرت تھی کہ بس پوری ہوئی

آنسوؤں میں بھیگ جانے کی ہوس پوری ہوئی

آ رہی ہے جسم کی دیوار گرنے کی صدا

اک عجب خواہش تھی جو اب کے برس پوری ہوئی

اس خزاں آثار لمحے کی حکایت ہے یہی

اک گل نا آفریدہ کی ہوس پوری ہوئی

آگ کے شعلوں سے سارا شہر روشن ہو گیا

ہو مبارک آرزوئے خار و خس پوری ہوئی

کیسی دستک تھی کہ دروازے مقفل ہو گئے

اور اس کے ساتھ روداد قفس پوری ہوئی

شہریار

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(750) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Shahryar, Aankh Ki Yeh Aik Hasrat Thi Ke Bas Poori Hoi in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 150 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Shahryar.