Kab Tak Karkti Dhoop Main Ankhen Jlayen Hum

کب تک کڑکتی دھوپ میں آنکھیں جلائیں ہم

کب تک کڑکتی دھوپ میں آنکھیں جلائیں ہم

سایہ دکھائی دے تو کہیں بیٹھ جائیں ہم

مٹتی نہیں کسی سے بھی قربت کی دوریاں

گر کھو گیا ہو تو تو تجھے ڈھونڈ لائیں ہم

بے نور ہو چلی ہیں تمنا کی بستیاں

کب تک چراغ یاد گزشتہ جلائیں ہم

تیرا وجود بیتی ہوئی زندگی کی یاد

تو آ چکے تو شہر میں دھومیں مچائیں ہم

سو طرح کی بہار ہے سو رنگ کی خزاں

اس دل کی وسعتوں میں کہیں کھو نہ جائیں ہم

ہر سانحہ پکار کے کہتا ہے چپ رہو

کب تک دلوں کی بات زباں تک نہ لائیں ہم

اس شہر خامشی میں کوئی جاگتا بھی ہو

شہزادؔ کس کو صبح کا مژدہ سنائیں ہم

شہزاد احمد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1162) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Shahzad Ahmed, Kab Tak Karkti Dhoop Main Ankhen Jlayen Hum in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 101 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Shahzad Ahmed.