Maal Gardish Lail O Nehar Koch Bhi Nahi

مآل گردش لیل و نہار کچھ بھی نہیں

مآل گردش لیل و نہار کچھ بھی نہیں

ہزار نقش ہیں اور آشکار کچھ بھی نہیں

ہر ایک موڑ پہ دنیا کو ہم نے دیکھ لیا

سوائے کشمکش روزگار کچھ بھی نہیں

نشان راہ ملے بھی یہاں تو کیسے ملے

سوائے خاک سر رہ گزار کچھ بھی نہیں

بہت قریب رہی ہے یہ زندگی ہم سے

بہت عزیز سہی اعتبار کچھ بھی نہیں

نہ بن پڑا کہ گریباں کے چاک سی لیتے

شعور ہو کہ جنوں اختیار کچھ بھی نہیں

کھلے جو پھول وہ دست خزاں نے چھین لیے

نصیب دامن فصل بہار کچھ بھی نہیں

زمانہ عشق کے ماروں کو مات کیا دے گا

دلوں کے کھیل میں یہ جیت ہار کچھ بھی نہیں

یہ میرا شہر ہے میں کیسے مان لوں اخترؔ

نہ رسم و راہ نہ وہ کوئے یار کچھ بھی نہیں

اختر سعید خان

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(446) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Akhtar Saeed Khan, Maal Gardish Lail O Nehar Koch Bhi Nahi in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 51 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Akhtar Saeed Khan.