Mouj Shamem Hain Nah Khiram Saba Hain Hum

موج شمیم ہیں نہ خرام صبا ہیں ہم

موج شمیم ہیں نہ خرام صبا ہیں ہم

ٹھہری ہوئی گلوں کے لبوں پر دعا ہیں ہم

بیگانہ خلق سے ہیں نہ تجھ سے خفا ہیں ہم

اے زندگی معاف کہ دیر آشنا ہیں ہم

اس راز کو بھی فاش کر اے چشم دل نواز

کانٹا کھٹک رہا ہے یہ دل میں کہ کیا ہیں ہم

یا رب ترا کمال ہنر ہم پہ ختم ہے

یا صرف مشق ناز کا اک تجربہ ہیں ہم

آخر ترے سلوک نے جھٹلا دیا اسے

اک زعم تھا ہمیں کہ سراپا وفا ہیں ہم

کل اس زمیں پہ اتریں گے پھولوں کے قافلے

اک پیکر بہار کی آواز پا ہیں ہم

اختر سعید خان

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(486) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Akhtar Saeed Khan, Mouj Shamem Hain Nah Khiram Saba Hain Hum in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 51 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Akhtar Saeed Khan.