Ghatain Ghirti Hain Bijli Karak K Girti Hai

گھٹائیں گھرتی ہیں بجلی کڑک کے گرتی ہے

گھٹائیں گھرتی ہیں بجلی کڑک کے گرتی ہے

یہ کس کی پیاس ہے جو بے قرار پھرتی ہے

عجیب خوف کی بستی ہے یہ دیا ہی نہیں

ہوا بھی خواہش دل کو چھپائے پھرتی ہے

نظر نہ پھیر ندامت کو سیر ہونے دے

یہ بدلی دل میں کہاں روز روز گھرتی ہے

سمیٹ لیتی ہے ہر شے کو اپنے پیکر میں

شبیہ کس کی ہے جو پتلیوں میں پھرتی ہے

حویلی چھوڑنے کا وقت آ گیا ارشدؔ

ستوں لرزتے ہیں اور چھت کی مٹی گرتی ہے

ارشد عبدالحمید

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1361) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Arshad Abdul Hamid, Ghatain Ghirti Hain Bijli Karak K Girti Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Funny, Friendship, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 37 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Funny, Friendship, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Arshad Abdul Hamid.