Dedae Berang Main Khoon Rang Manzar Rakh Diye

دیدۂ بے رنگ میں خوں رنگ منظر رکھ دیے

دیدۂ بے رنگ میں خوں رنگ منظر رکھ دیے

ہم نے اس دشت تپاں میں بھی سمندر رکھ دیے

وہ جگہ جو لعل و گوہر کے لیے مقصود تھی

کس نے یہ سنگ ملامت اس جگہ پر رکھ دیے

اب کسی کی چیخ کیا ابھرے کہ میر شہر نے

ساکنان شہر کے سینوں پہ پتھر رکھ دیے

شاخساروں پر نہ جب اذن نشیمن مل سکا

ہم نے اپنے آشیاں دوش ہوا پر رکھ دیے

اہل زر نے دیکھ کر کم ظرفی اہل قلم

حرص زر کے ہر ترازو میں سخن ور رکھ دیے

ہم تو ابریشم کی صورت نرم و نازک تھے مگر

تلخئ حالات نے لہجے میں خنجر رکھ دیے

جس ہوا کو وہ سمجھتے تھے کہ چل سکتی نہیں

اس ہوا نے کاٹ کر لشکر کے لشکر رکھ دیے

بخشؔ صیاد ازل نے حکم آزادی کے ساتھ

اور اسیری کے بھی خدشے دل کے اندر رکھ دیے

بخش لائل پوری

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(633) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Bakhsh Layalpuri, Dedae Berang Main Khoon Rang Manzar Rakh Diye in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 21 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Bakhsh Layalpuri.