RatoN Kay AndheroN MeiN Yeh Log Ajab Niklay

راتوں کے اندھیروں میں یہ لوگ عجب نکلے

راتوں کے اندھیروں میں یہ لوگ عجب نکلے

سب نام و نسب والے بے نام و نسب نکلے

تعمیر پسندی نے کچھ زیست پر اکسایا

کچھ موت کے ساماں بھی جینے کا سب نکلے

یہ نور کے سوداگر خود نور سے عاری ہیں

گردوں پہ مہ و انجم تنویر طلب نکلے

یہ دشت یہ صحرا سب ویران ہیں برسوں سے

اس سمت بھی دیوانہ تکبیر بہ لب نکلے

تہذیب کی بے باکی ایسی تو نہ تھی پہلے

ہم جب بھی کہیں نکلے تا حد ادب نکلے

تسکیں کے لئے ہم نے جن سے بھی گزارش کی

ہم سے بھی زیادہ وہ تسکین طلب نکلے

ہستی کی مسافت میں اپنا جنہیں سمجھا تھا

جب وقت پڑا فرحتؔ وہ مہر بہ لب نکلے

فرحت قادری

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(626) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Farhat Qadri, RatoN Kay AndheroN MeiN Yeh Log Ajab Niklay in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 9 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Farhat Qadri.