MENU Open Sub Menu

Woh Khul Kar Mujh Say Milta Bhi NahiN Hae

وہ کھل کر مجھ سے ملتا بھی نہیں ہے

وہ کھل کر مجھ سے ملتا بھی نہیں ہے

مگر نفرت کا جذبہ بھی نہیں ہے

یہاں کیوں بجلیاں منڈلا رہی ہیں

یہاں تو ایک تنکا بھی نہیں ہے

برہنہ سر میں صحرا میں کھڑا ہوں

کوئی بادل کا ٹکڑا بھی نہیں ہے

چلے آؤ مرے ویران دل تک

ابھی اتنا اندھیرا بھی نہیں ہے

سمندر پر ہے کیوں ہیبت سی طاری

مسافر اتنا پیاسا بھی نہیں ہے

مسائل کے گھنے جنگل سے یارو

نکل جانے کا رستہ بھی نہیں ہے

عجب ماحول ہے گلشن کا فرحتؔ

ہوا کا تازہ جھونکا بھی نہیں ہے

فرحت قادری

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(309) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Farhat Qadri, Woh Khul Kar Mujh Say Milta Bhi NahiN Hae in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 9 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Farhat Qadri.