Teri Khatir Yeh Fasoon Hum Nay Jaga Rakha Hai

تیری خاطر یہ فسوں ہم نے جگا رکھا ہے

تیری خاطر یہ فسوں ہم نے جگا رکھا ہے

ورنہ آرائش افکار میں کیا رکھا ہے

ہے ترا عکس ہی آئینۂ دل کی زینت

ایک تصویر سے البم کو سجا رکھا ہے

برگ صد چاک کا پردہ ہے شگفتہ گل سے

قہقہوں سے کئی زخموں کو چھپا رکھا ہے

اب نہ بھٹکیں گے مسافر نئی نسلوں کے کبھی

ہم نے راہوں میں لہو اپنا جلا رکھا ہے

ہم سے انساں کی خجالت نہیں دیکھی جاتی

کم سوادوں کا بھرم ہم نے روا رکھا ہے

کس قیامت کا ہے دیدار ترا وعدہ شکن

دل بے تاب نے اک حشر اٹھا رکھا ہے

کوئی مشکل نہیں پہچان ہماری فارغؔ

اپنی خوشبو کا سفر ہم نے جدا رکھا ہے

فارغ بخاری

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(952) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Farigh Bukhari, Teri Khatir Yeh Fasoon Hum Nay Jaga Rakha Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 43 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Farigh Bukhari.