Woh Roshni Hae KahaN Jis Kay Baad Saya NahiN

وہ روشنی ہے کہاں جس کے بعد سایا نہیں

وہ روشنی ہے کہاں جس کے بعد سایا نہیں

کسی نے آج تلک یہ سراغ پایا نہیں

کہاں سے لاؤں وہ دل جو ترا برا چاہے

عدوئے جاں ترا دکھ بھی کوئی پرایا نہیں

تری صباحت صد رنگ میں بکھر جاؤں

ابھی وہ لمحہ مری زندگی میں آیا نہیں

ترے وجود پہ انگڑائی بن کے ٹوٹا ہے

وہ نغمہ جو کسی مطرب نے گنگنایا نہیں

نئی نویلی زمینوں کی سوندھی خوشبو میں

وہ چاندنی ہے کہ جس میں کوئی نہایا نہیں

ہم ایک فکر کے پیکر ہیں اک خیال کے پھول

ترا وجود نہیں ہے تو میرا سایا نہیں

وہ باب جس میں توانائیوں کی خوشبو ہے

فسانہ ساز نے فارغؔ کبھی سنایا نہیں

فارغ بخاری

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(551) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Farigh Bukhari, Woh Roshni Hae KahaN Jis Kay Baad Saya NahiN in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 43 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Farigh Bukhari.