Nigar Khanah Arz O Sama Mila Ke Nahi

نگار خانہ ارض و سما ملا کہ نہیں

نگار خانہ ارض و سما ملا کہ نہیں

اگر ملا تو کوئی دل ربا ملا کہ نہیں

شکستہ دل کو ضرورت ہے کھلکھلانے کی

پیام گل سے تجھے حوصلہ ملا کہ نہیں

سیاہ نیند میں جلتے ہوئے چراغوں کو

کسی گلی میں کوئی جاگتا ملا کہ نہیں

رکے ہوئے تو رکے ہی رہیں گے تا دم مرگ

جو چل پڑے تھے انہیں راستہ ملا کہ نہیں

کسی کو پھول کھلاتے ہوئے مرے گھر میں

کوئی دمکتا ہوا آئنہ ملا کہ نہیں

شگفت‌ خواب سے بھیگی ہوئی ان آنکھوں میں

کوئی ستارہ مرے کام کا ملا کہ نہیں

غزل کو سب کے لئے آئنہ بناتے ہوئے

کسی پری سے ترا قافیہ ملا کہ نہیں

رکا تھا اور کہاں کاروان راحت عشق

پھر اس کے بعد وہ شیریں ادا ملا کہ نہیں

سوال کرتے ہیں اکثر مرے عدو ساجدؔ

کہ اس نگر میں کوئی آشنا ملا کہ نہیں

غلام حسین ساجد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(378) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ghulam Hussain Sajid, Nigar Khanah Arz O Sama Mila Ke Nahi in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 88 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ghulam Hussain Sajid.