Kahin To Gird Uray Ya Kahin Gubhar Dikhe

کہیں تو گرد اڑے یا کہیں غبار دکھے

کہیں تو گرد اڑے یا کہیں غبار دکھے

کہیں سے آتا ہوا کوئی شہوار دکھے

خفا تھی شاخ سے شاید کہ جب ہوا گزری

زمیں پہ گرتے ہوئے پھول بے شمار دکھے

رواں ہیں پھر بھی رکے ہیں وہیں پہ صدیوں سے

بڑے اداس لگے جب بھی آبشار دکھے

کبھی تو چونک کے دیکھے کوئی ہماری طرف

کسی کی آنکھ میں ہم کو بھی انتظار دکھے

کوئی طلسمی صفت تھی جو اس ہجوم میں وہ

ہوئے جو آنکھ سے اوجھل تو بار بار دکھے

گلزار

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1031) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Gulzar, Kahin To Gird Uray Ya Kahin Gubhar Dikhe in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 107 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Gulzar.