Jab Koi Kalie Sehan Gulisitan Main Khuli Hai

جب کوئی کلی صحن گلستاں میں کھلی ہے

جب کوئی کلی صحن گلستاں میں کھلی ہے

شبنم مری آنکھوں میں وہیں تیر گئی ہے

جس کی سر افلاک بڑی دھوم مچی ہے

آشفتہ سری ہے مری آشفتہ سری ہے

اپنی تو اجالوں کو ترستی ہیں نگاہیں

سورج کہاں نکلا ہے کہاں صبح ہوئی ہے

بچھڑی ہوئی راہوں سے جو گزرے ہیں کبھی ہم

ہر گام پہ کھوئی ہوئی اک یاد ملی ہے

اک عمر سنائیں تو حکایت نہ ہو پوری

دو روز میں ہم پر جو یہاں بیت گئی ہے

ہنسنے پہ نہ مجبور کرو لوگ ہنسیں گے

حالات کی تفسیر تو چہرے پہ لکھی ہے

مل جائیں کہیں وہ بھی تو ان کو بھی سنائیں

جالبؔ یہ غزل جن کے لیے ہم نے کہی ہے

حبیب جالب

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(2371) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Habib Jalib, Jab Koi Kalie Sehan Gulisitan Main Khuli Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 76 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Habib Jalib.