Manzil Kahan Hai Dor Talak Raste Hain Yaar

منزل کہاں ہے دور تلک راستے ہیں یار

منزل کہاں ہے دور تلک راستے ہیں یار

کس جستجو میں خواب کے یہ قافلے ہیں یار

پل پل بدلتا رہتا ہے تہذیب کا مزاج

لمحوں کی دسترس میں عجب سلسلے ہیں یار

ہے سابقہ ہزار مراحل سے اور پھر

اس زندگی کے بعد بھی کچھ مرحلے ہیں یار

تو ہی بتا تجھے میں رکھوں کس شمار میں

اچھے‌‌برے سبھی سے مرے رابطے ہیں یار

ہاں تجھ سے بے وفائی کی امید تو نہیں

پر سچ کہوں تو دل میں کئی واہمے ہیں یار

خواہش کا احترام ہے جذبوں کی آنچ بھی

نیندوں کا اہتمام ہے اور رت جگے ہیں یار

نظمیں کہاں ہیں فلسفے منظوم ہیں تمام

غزلیں کہاں ہیں عشق کے سب مرثیے ہیں یار

احباب رشتے دار سبھی ممبئی میں ہیں

لیکن دلوں کے بیچ بڑے فاصلے ہیں یار

حامد اقبال صدیقی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(503) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Hamid Iqbal Siddiqui, Manzil Kahan Hai Dor Talak Raste Hain Yaar in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 11 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.8 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Hamid Iqbal Siddiqui.