Jazb Ki Sab Intehai Ka Tamasha Har Taraf

جذب کی سب انتہاؤں کا تماشا ہر طرف

جذب کی سب انتہاؤں کا تماشا ہر طرف

تم کہا تھے تم نہیں تھے میں ہی میں تھا ہر طرف

یہ مرے دل میں سمٹ آئے گی اک دن دیکھنا

تم نے کس عالم میں پھیلائی تھی دنیا ہر طرف

دشت میں بھی آ ملے تھے کائناتی سلسلے

وحشتوں نے کر دیا تھا میرا چرچا ہر طرف

تم نے میرے در پہ لا چھوڑا اسے اچھا کیا

ورنہ یوں ہی بے سبب یہ غم بھٹکتا ہر طرف

میرے حق میں تو ہر اک موسم خزاں آثار تھا

کس کی صناعی نے گل منظر سجایا ہر طرف

حامد اقبال صدیقی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(409) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Hamid Iqbal Siddiqui, Jazb Ki Sab Intehai Ka Tamasha Har Taraf in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 11 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Hamid Iqbal Siddiqui.