Khawar O Ruswa Nah Sir Kocha O Bazar Milay

خوار و رسوا نہ سر کوچہ و بازار ملے

خوار و رسوا نہ سر کوچہ و بازار ملے

ہے یہی عشق کا اعزاز سر دار ملے

زندگی سے یہ رہا اپنی ملاقات کا حال

کسی بیزار سے جیسے کوئی بیزار ملے

ہم سے پہلے بھی یہ افسانہ بیاں ہوتا تھا

کتنے غم پھر بھی ہمیں تشنۂ‌ اظہار ملے

زندگی نے کوئی آئینہ دکھایا جب بھی

اپنے چہرے پہ ہمیں موت کے آثار ملے

فکر تعبیر میں نیند اڑ گئی دیوانوں کی

خواب اپنے ہی ان آنکھوں میں جو بیدار ملے

مسکراتے ہوئے چہروں پہ نہ جاؤ مخمورؔ

شاید ان میں بھی کوئی تم سا دل افگار ملے

مخمور سعیدی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(704) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Makhmoor Saeedi, Khawar O Ruswa Nah Sir Kocha O Bazar Milay in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 43 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Makhmoor Saeedi.