Yaqeen Ho Tu Koi Rasta Nikalta Hai

یقین ہو تو کوئی راستہ نکلتا ہے

یقین ہو تو کوئی راستہ نکلتا ہے

ہوا کی اوٹ بھی لے کر چراغ جلتا ہے

سفر میں اب کے یہ تم تھے کہ خوش گمانی تھی

یہی لگا کہ کوئی ساتھ ساتھ چلتا ہے

غلاف گل میں کبھی چاندنی کے پردے میں

سنا ہے بھیس بدل کر بھی وہ نکلتا ہے

لکھوں وہ نام تو کاغذ پہ پھول کھلتے ہیں

کروں خیال تو پیکر کسی کا ڈھلتا ہے

رواں دواں ہے ادھر ہی تمام خلق خدا

وہ خوش خرام جدھر سیر کو نکلتا ہے

امید و یاس کی رت آتی جاتی رہتی ہے

مگر یقین کا موسم نہیں بدلتا ہے

منظور ہاشمی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(2281) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Manzoor Hashmi, Yaqeen Ho Tu Koi Rasta Nikalta Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 18 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Manzoor Hashmi.